مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے ساتھ ساتھ کشمیریوں سے بھی مذاکرات کئے جائیں: نیشنل کانفرنس

سری نگر:نیشنل کانفرنس کے معاون جنرل سکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفی کمال نے وزارت خارجہ کی طرف سے پاکستان کے ساتھ تمام مسائل پر مذاکرات کے لئے آمادگی ظاہر کرنے کو امید کی کرن قرار دیتے دونوں ممالک کی سیاسی اور فوجی قیادت سے آپس میں دوستانہ ماحول پیدا کرنے کے لئے ٹھوس اقدامات اٹھانے کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے مرکزی سرکار سے اپیل کی کہ وہ پاکستان کے ساتھ ساتھ جموں وکشمیر کے لوگوں کے ساتھ بھی مذاکراتی عمل شروع کرے کیونکہ اس مسئلے کے بنیادی فریق یہاں کے لوگ ہی ہیں۔
ڈاکٹر کمال نے جمعہ کو یہاں اپنے ایک بیان میں کہا ’مسئلہ کشمیر کے سیاسی حل کے ذریعے ہی ریاست خصوصاً وادی کشمیر کے حالات پٹری پر لائے جاسکتے ہیں اور دیرپا امن و امان کی فضائ قائم کی جاسکتی ہے، اس لئے ضروری ہے کہ حکومت ہند مزید وقت ضائع کئے بغیرمسئلہ کشمیر کے بنیادی فریقوں کے ساتھ غیر مشروط مذاکراتی عمل شروع کرے‘۔ انہوں نے کہا کہ اگر مرکزی حکومت اب بھی مسئلہ کشمیر کے تئیں غافل اور غیر سنجیدہ رہی تو اس کے خطرناک اور سنگین نتائج برآمد ہونے کے قوی امکانات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ برصغیر میں دیر پا امن دونوں پڑوسیوں کے مضبوط اور خوشگوار رشتوں سے مشروط ہے اور دونوں ممالک کی قربت میں ہی تمام مسائل کے حل کا راز مضمر ہے۔ ڈاکٹر کمال نے ہندوستان اور پاکستان کو مشورہ دیا کہ وہ مسئلہ کشمیر اور تمام مسائل حل کرنے کے لئے مذاکرات کی میز پر آئیں کیونکہ اس کے سوا اور کوئی متبادل نہیں۔

Title: national conference gen secy dr sheikh mustafa kamal statement | In Category: کشمیر  ( kashmir )